کاتالونیا کا اسپین سے آزادی کے لیے ریفرنڈم کا اعلان

01

اسپین میں کاتالونیا کے صدر نے نومبر میں اس بارے میں ایک عوامی ریفرنڈم کے انعقاد کا باقاعدہ اعلان کر دیا ہے کہ آیا ملک کے اس امیر ترین خطے کو ایک آزاد ریاست ہونا چاہیے۔ میڈرڈ حکومت نے اس اقدام کو فورا مسترد کر دیا ہے

کاتالونیا کے صدر آرٹُؤر ماس نے جیسے ہی کل ہفتے کے روز یہ اعلان کیا کہ اس خطے کی باقی ماندہ اسپین سے ممکنہ آزادی کے لیے عوامی ریفرنڈم نو نومبر کو کرایا جائے، میڈرڈ میں ہسپانوی حکومت نے اس اعلان کی مخالفت کرتے ہوئے یہ کہنے میں کوئی دیر نہ کی کہ ایسا کوئی بھی اقدام غیر آئینی ہو گا۔

بارسلونا سے ملنے والی رپورٹوں کے مطابق میڈرڈ حکومت نے واضح کر دیا ہے کہ وہ کاتالونیا میں ایسے کسی بھی ریفرنڈم کے انعقاد کی اجازت نہیں دے گی۔ ہسپانوی خاتون نائب وزیر اعظم سورایا سائنز دے سانتاماریا نے تو خبردار کرتے ہوئے یہاں تک کہہ دیا کہ ’کوئی بھی ہسپانوی عوام کی قومی خواہش سے بالا تر‘ نہیں ہے۔

02

کاتالونیا کے صدر آرٹُؤر ماس نے ریفرنڈم کی تاریخ کا اعلان کرتے ہوئے ساتھ ہی اس بارے میں ایک صدارتی حکم نامے پر دستخط بھی کر دیے

کاتالونیا کے صدر آرٹُؤر ماس نے ریفرنڈم کی تاریخ کا اعلان کرتے ہوئے ساتھ ہی اس بارے میں ایک صدارتی حکم نامے پر دستخط بھی کر دیے۔ لیکن ہفتے ہی کے روز میڈرڈ میں ملکی حکومت نے کوئی وقت ضائع کیے بغیر اسپین کی آئینی عدالت میں اس اقدام کو چیلنج کرنے کی تیاریاں شروع کر دیں۔ امکان ہے کہ ملکی آئینی عدالت کاتالونیا کے خطے کے صدر کے حکم نامے کو غیر مؤثر قرار دے دے گی۔

ہسپانوی خطے کاتالونیا میں آزادی کی مہم حالیہ برسوں میں کافی زور پکڑ چکی ہے۔ اسی مہینے سکاٹ لینڈ کی برطانیہ سے ممکنہ علیحدگی کے بارے میں کرائے گئے لیکن ناکام رہنے والے ریفرنڈم سے کئی روز قبل 11 ستمبر کو بارسلونا میں قریب 1.eight ملین شہریوں نے احتجاج کرتے ہوئے مطالبہ کیا تھا کہ کاتالونیا میں بھی آزادی سے متعلق عوامی ریفرنڈم کرایا جائے۔

صدر آرٹُؤر ماس نے بارسلونا کے گینیرالیٹاٹ پیلس Generalitat Palace میں منعقدہ ایک تقریب میں ریفرنڈم کے انعقاد کے حکم نامے پر دستخط کرنے کے بعد کہا تھا، ’’کاتالونیا اپنی سوچ کا اظہار کرنا چاہتا ہے۔ وہ چاہتا ہے کہ اس کی آواز سنی جائے۔ وہ ووٹ دینا چاہتا ہے۔‘‘ اس پر کچھ ہی دیر بعد اسپین کی نائب وزیر اعظم سائنز دے سانتاماریا نے میڈرڈ میں ایک ہنگامی پریس کانفرنس میں کہا، ’’اس ریفرنڈم کا انعقاد نہیں ہو گا کیونکہ یہ غیر آئینی ہے۔‘‘

دے سانتاماریا نے کہا، ’’ہمیں کاتالونیا کے صدر کے اس اقدام پر بہت افسوس ہے۔ ہم اسے ایک غلطی تصور کرتے ہیں۔ اس سے کاتالان معاشرے میں ٹوٹ پھوٹ پیدا ہو گی اور کاتالان باشندے تقسیم کا شکار ہو کر یورپ سے دور چلے جائیں گے۔‘‘ ہسپانوی حکومت کے لیے تسلی کی بات یہ ہے کہ آرٹُؤر ماس نے یہ عہد تو کیا ہے کہ کاتالونیا کے عوام کو علیحدگی کے موضوع پر ووٹ کے ذریعے فیصلے کا موقع ضرور دیں گے تاہم ساتھ ہی وہ یہ وعدہ بھی کر چکے ہیں کہ وہ ہسپانوی قانون کا احترام کریں گے۔

7.5 ملین کی آبادی والا کاتالونیا اسپین کا امیر ترین علاقہ ہے جو ملکی معیشت میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتا ہے۔ کاتالونیا سیاحوں کی ایک پسندیدہ منزل بھی ہے اور ہسپانوی ریاست کو اس کی مجموعی آمدنی کا پانچواں حصہ اسی خطے سے حاصل ہوتا ہے۔

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*