ایبولہ وائرس یورپ تک پہنچ گیا

6918365666ebolaavrupa

جان لیوا ایبولہ وائرس میں مبتلا ایک ہسپانوی نرس کی تصدیق کے بعد حکام نےحفاظتی اقدامات اٹھانے شروع کر دیے ہیں

موذی ایبولہ وائرس کی یورپ میں بھی نشاندہی ہوئی ہے۔
افریقہ سے اسپین لائے جانے والے مریضوں کی نگہداشت کرنے والی ایک نرس بھی اس وائرس میں مبتلا ہو گئی ہے۔
اس نرس کو دارالحکومت میڈرڈ کے قریب ایک ہسپتال میں پیر کی صبح شدید بخار کی حالت میں داخل کروایا گیا ہے جبکہ ان کے ساتھیوں کی نگرانی کی جا رہی ہے۔
تمام تر تدابیر کے باوجود اس وائرس کی کس طرح منتقلی کے حوالے سے ہسپانوی وزارت صحت نے ایک ورکنگ ٹیم تشکیل دی ہے جو کہ اس معاملے پر تحقیقات کرے گی۔
اس سے قبل افریقہ میں خدمات فراہم کرنے والے دو ہسپانوی شہری اپنے ملک لائے جانے کے بعد جان بحق ہو گئے تھے۔
یہ واقع اسپین اور یورپ میں پہلی بار جان لیوا وائرس کے کسی صحت مند شخص میں سرایت کرنے کے کے اعتبار سے اہمیت کا حامل ہے۔
ادھر امریکی صدر براک اوباما نے ایبولا کی وبا پر قابو پانے کی کوششوں کو امریکی قومی سلامتی کے معاملات میں پہلی ترجیح قرار دیا ہے۔
صحت کی عالمی تنظیم کے مطابق اب تک اس مرض کے نتیجے میں 3400 کے قریب افراد ہلاک ہو چکے ہیں جن میں سے اکثریت کا تعلق مغربی افریقہ سے ہے۔
اب تک دنیا بھر میں ایبولا کے ساڑھے سات ہزار تصدیق شدہ مریض ہیں مگر حکام کا کہنا ہے کہ اصل تعداد بہت زیادہ ہے۔اب تک سب سے زیادہ متاثر ہونے والے ممالک میں گنی، سیرالیون اور لائبیریا شامل ہیں۔

Be the first to comment

Leave a Reply

Your email address will not be published.


*